Amity Friends



 
HomeFAQRegisterLog in
Search
 
 

Display results as :
 
Rechercher Advanced Search
Latest topics
» Dedicated to all students . . .
Mon 11 Feb 2013 - 0:38 by Admin

» Muhbbat mai b dhoka hai
Mon 11 Feb 2013 - 0:37 by Admin

» Kids Furniture
Mon 11 Feb 2013 - 0:36 by Admin

» Women High-Heel Sandals
Mon 11 Feb 2013 - 0:35 by Admin

» Amazing Golden Keyboard.
Mon 11 Feb 2013 - 0:33 by Admin

» Coming Soon by Sony
Mon 11 Feb 2013 - 0:33 by Admin

» Happy New Year 2013 To All Friends.!
Sat 5 Jan 2013 - 11:50 by Shahnaz Sheikh

» Two Lines Asha'ar
Tue 1 Jan 2013 - 4:24 by Barish K Baad

» Made a Mistake
Thu 20 Dec 2012 - 13:58 by Master Mind

Navigation
 Portal
 Index
 Memberlist
 Profile
 FAQ
 Search
Forum
Affiliates
free forum
 
December 2017
SunMonTueWedThuFriSat
     12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930
31      
CalendarCalendar
Social bookmarking
Social bookmarking digg  Social bookmarking delicious  Social bookmarking reddit  Social bookmarking stumbleupon  Social bookmarking slashdot  Social bookmarking yahoo  Social bookmarking google  Social bookmarking blogmarks  Social bookmarking live      

Bookmark and share the address of Amity Friends on your social bookmarking website

Bookmark and share the address of Amity Friends on your social bookmarking website
Statistics
We have 132 registered users
The newest registered user is chikanbarn

Our users have posted a total of 3683 messages in 1124 subjects
Top posting users this week
Most Viewed Topics
Serial,CD-Key, code
La Hasil by Umera Ahmed
Arabic MakeUp
...::: Al-Berooni ( Muslim Scientist ) Urdu :::...
Sultan Mahmood Ghaznavi
Awesome Romantic Places
Welcome Kaif On Amity Forum...!!
Beautiful sayings of our beloved Prophet MOHAMMAD (S.A.W)
Anarkali Suits
Mirza Asadullah Baig Khan
Top posting users this month
Keywords

Share | 
 

 Parveen Shakir

View previous topic View next topic Go down 
AuthorMessage
Shahnaz Sheikh
Moderators
Moderators
avatar

Female Chinese zodiac : Pig
Posts : 118
Location Sapno mai

PostSubject: Parveen Shakir   Mon 17 Sep 2012 - 13:49


Parveen Shakir was born on 24th November, 1952 in Karachi, Pakistan. She was highly educated with two masters degrees, one in English literature and one in linguistics. She also held a Ph.D and another masters degree in Bank Administration.

She was a teacher for nine years before she joined the Civil Service and worked in the Customs department. In 1986 she was appointed the second secretary, CBR in Islamabad.

A number of books of her poetry have been published. In chronological order, they are Khushboo (1976), Sad-barg (1980), Khud-kalaami (1990), Inkaar (1990) and Maah-e-Tamaam (1994). Her first book, Khushboo, won the Adamjee award. Later she was awarded the Pride of Performance award, which is the highest award given by the Pakistan government.

On 26th December, 1994, on her way to work, her car collided with a truck and the world of modern Urdu poetry lost one of its brightest stars.

Parveen Shakir initially wrote under the pen-name of 'Beena'. She considered Ahmed Nadeem Qasmi her 'ustad' and used to called him 'Ammujaan'. She was married to Dr. Nasir Ahmed but got divorced from him sometime before her untimely demise in 1994. They had one son - Murad Ali.
Back to top Go down
Shahnaz Sheikh
Moderators
Moderators
avatar

Female Chinese zodiac : Pig
Posts : 118
Location Sapno mai

PostSubject: Re: Parveen Shakir   Mon 17 Sep 2012 - 13:54

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

پروین شاکر
کے پہلے مجموعہ کلام
خوشبو
میں شامل تمام مختصر نظمیں اِس دھاگے میں پیش کی جائیں گی !

============

ایک شعر
ہمیں خبر ہے ، ہوا کا مزاج رکھتے ہو
مگر یہ کیا ، کہ ذرا دیر کو رُکے بھی نہیں
============

پیش کش
اتنے اچھے موسم میں
روٹھنا نہیں اچھا
ہار جیت کی باتیں
کل پہ ہم اٹھا رکھیں
آج دوستی کر لیں !
============

واہمہ
تمھارا کہنا ہے
تم مجھے بے پناہ شدت سے چاہتے ہو
تمھاری چاہت
وصال کی آخری حدوں تک
مرے فقط میرے نام ہوگی
مجھے یقین ہے مجھے یقین ہے
مگر قسم کھانے والے لڑکے
تمھاری آنکھوں میں ایک تل ہے!

============

پیار
ابرِ بہار نے
پھول کا چہرا
اپنے بنفشی ہاتھ میں لے کر
ایسے چوما
پھول کے سارے دکھ
خوشبو بن کر بہہ نکلے ہیں
============

گمان
میں کچی نیند میں ہوں
اور اپنے نیم خوابیدہ تنفس میں اترتی
چاندنی کی چاپ سنتی ہوں
گماں ہے
آج بھی شاید
میرے ماتھے پہ تیرے لب
ستارے ثبت کرتے ہیں
============

بس اتنا یاد ہے
دعا تو جانے کون سی تھی
ذہن میں نہیں
بس اتنا یاد ہے
کہ دو ہتھیلیاں ملی ہوئی تھیں
جن میں ایک مری تھی
اور اک تمھاری !

============

فاصلے
پہلے خط روز لکھا کرتے تھے
دوسرے تیسرے ، تم فون بھی کر لیتے تھے
اور اب یہ ، کہ تمھاری خبریں
صرف اخبار سے مل پاتی ہیں !
============

کتھا رس
میرے شانوں پہ سر رکھ کے
آج
کسی کی یاد میں وہ جی بھر کے رویا !
============

چاند
ایک سے مسافر ہیں
ایک سا مقدر ہے
میں زمین پر تنہا
اور وہ آسمانوں میں !


============


نوید
سماعتوں کو نوید ہو ۔۔۔ کہ
ہوائیں خوشبو کے گیت لے کر
دریچہٴ گل سے آ رہی ہیں !
============

ایک شعر
خوشبو بتا رہی ہے کہ وہ راستے میں ہے
موجِ ہوا کے ہاتھ میں اس کا سراغ ہے
============

تشکر
دشتِ غربت میں جس پیڑ نے
میرے تنہا مسافر کی خاطر گھنی چھاؤں پھیلائی ہے
اُس کی شادابیوں کے لیے
میری سب انگلیاں ۔۔۔
ہوا میں دعا لکھ رہی ہیں !

============

ایک شعر
لو ! میں آنکھیں بند کیے لیتی ہوں ، اب تم رخصت ہو
دل تو جانے کیا کہتا ہے ، لیکن دل کا کہنا کیا !
============

توقع
جب ہوا
دھیمے لہجوں میں کچھ گنگناتی ہوئی
خواب آسا ، سماعت کو چھو جائے ، تو
کیا تمھیں کوئی گزری ہوئی بات یاد آئے گی ؟
============

اعتراف
جانے کب تک تری تصویر نگاہوں میں رہی
ہو گئی رات ترے عکس کو تکتے تکتے
میں نے پھر تیرے تصور کے کسی لمحے میں
تیری تصویر پہ لب رکھ دیے آہستہ سے !

============


ایک شعر
میں جب بھی چاہوں ، اُسے چھو کے دیکھ سکتی ہوں
مگر وہ شخص کہ لگتا ہے اب بھی خواب ایسا !
============

موسم کی دُعا
پھر ڈسنے لگی ہیں سانپ راتیں
برساتی ہیں آگ پھر ہوائیں
پھیلا دے کسی شکستہ تن پر
بادل کی طرح سے اپنی بانہیں !
============

مقدّر
میں وہ لڑکی ہوں
جس کو پہلی رات
کوئی گھونگھٹ اُٹھا کے یہ کہہ دے ۔۔
میرا سب کچھ ترا ہے ، دل کے سوا !
============

تیری ہم رقص کے نام
رقص کرتے ہوئے
جس کے شانوں پہ تُو نے ابھی سَر رکھا ہے
کبھی میں بھی اُس کی پناہوں میں تھی
فرق یہ ہے کہ میں
رات سے قبل تنہا ہوئی
اور تُو صبح تک
اس فریبِ تحفظ میں کھوئی رہے گی !
============

ایک شعر
حال پوچھا تھا اُس نےابھی
اور آنسو رواں ہو گئے !
============

پکنک
سکھیاں میری
کُھلے سمندر بیچ کھڑی ہنستی ہیں
اور میں سب سے دور ، الگ ساحل پر بیٹھی
آتی جاتی لہروں کو گنتی ہوں
یا پھر
گیلی ریت پہ تیرا نام لکھے جاتی ہوں !
============
جان پہچان
شور مچاتی موجِ آب
ساحل سے ٹکرا کے جب واپس لوٹی تو
پاؤں کے نیچے جمی ہوئی چمکیلی سنہری ریت
اچانک سرک گئی !
کچھ کچھ گہرے پانی میں
کھڑی ہوئی لڑکی نے سوچا
یہ لمحہ کتنا جانا پہچانا سا لگتا ہے!
============

دوست
اس اکیلی چٹان نے
سمندر کے ہمراہ
تنہائی کا زہر اتنا پیا ہے
کہ اس کا سنہری بدن نیلا پڑنے لگا ہے !
============

پسِ جاں
چاند کیا چھپ گیا ہے
گھنے بادلوں کے کنارے
روپہلے ہوئے جا رہے ہیں !
============
Back to top Go down
 
Parveen Shakir
View previous topic View next topic Back to top 
Page 1 of 1

Permissions in this forum:You cannot reply to topics in this forum
Amity Friends :: Bazm-e-Sukhan :: __Mehfil-e-Moshaira-
Jump to: